ہندوستان کے چیف جسٹس کا عدلیہ میں مداخلت نہ کر نے کا حکومت کو مشورہ

نئی دہلی: سپریم کورٹ کے چیف جسٹس تیرتھ سنگھ ٹھاکر نے آزاد عدلیہ کو جمہوریت کی ریڑھ کی ہڈی قرار دیتے ہوئے عاملہ اور مقننہ کو اس کے دائرہ اختیار میں مداخلت نہ کرنے کا مشورہ دیا اور اس کے ساتھ ہی عدلیہ کے تئیں لوگوں کی معتبریت برقرار رکھنے کے داخلی چیلنج سے نمٹنے کی بھی نصیحت کی۔
جسٹس ٹھاکر نے 37 ویں بھیم سین سچر میموریل لکچر کے دوران ’آزاد عدلیہ جمہوریت کا ستون‘ کے موضوع پر اپنے خطاب میں کہا کہ عدلیہ کو نہ صرف عاملہ اور مقننہ کی مداخلت جیسی بیرونی چیلنجوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے، بلکہ ججوں میں ذمہ داری کا فقدان اور معتبریت میں بتدریج گراوٹ جیسے اندرونی چیلنجوں سے بھی اسے دو چار ہونا پڑ رہا ہے۔
انہوں نے کہا کہ بیرونی چیلنجوں کے ساتھ ساتھ اندرونی چیلنجوں پر بھی نمٹنا وقت کا تقاضہ ہے، تاکہ لوگوں میں اپنے حقوق کی حفاظت کے حوالے سے عدلیہ کے تئیں اعتماد مضبوط ہو سکے۔انہوں نے کہا کہ آئین محض دستاویز نہیں بلکہ مقدس کتاب ہے جو شہریوں کو مساوات سمیت کئی بنیادی حق فراہم کرتا ہے اور ان کے حقوق کی حفاظت کی ذمہ داری عدلیہ پر ہوتی ہے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Independent judiciary is backbone of democracy justice ts thakur in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply