میں گوڈسے سے پہلے پیدا ہوئی ہوتی تو میں ہی گاندھی جی کو ہلاک کردیتی:ہندو عدالت کی جج

نئی دہلی : اکھل بھارتیہ ہندو مہا سبھا کے ذریعہ اتر پردیش کے شہر میرٹھ میں تشکیل دی گئی پہلی ہندو عدالت کی خاتون جج نے کہا ہے کہ انہیں اس پر فخر ہے کہ وہ اور ان کی تنظیم آل انڈیا ہندو مہا سبھاگاندھی کے قاتل ناتھو رام گوڈسے کی، جنہوں نے 30جنوری1948کو نئی دہلی میں مہاتما گاندھی کو گولی مار کر ہلاک کر دیا تھا، مرید ہے اور ان کی پوجا کرتی ہے۔

خود کو سماجی کارکن اور ریاضی کی پروفیسر بتانے والی پوجا شکلا نے آج تک نیوز چینل کو بتایا کہ انہیں اس بات پر فخر ہے کہ ہم ناتھو رام گوڈسے کی پوجا کرتے ہیں۔وہ گاندھی کے قاتل نہیں تھے۔

انہیں ہندوستانی آئین کے نفاذ سے پہلے ہی سزا دے دی گئی۔ انہوں نے کہا کہ وہ دعوے کے ساتھ کہتی ہیں کہ اگر میںناتھو رام گوڈسے سے پہلے پیدا ہوئی ہوتی تو میں ہی گاندھی کو ہلاک کر دیتی اور اگر آج بھی کوئی گاندھی پیدا ہوگا جو ملک کو تقسیم کرنے کی بات کرے گا تو ناتھو رام گوڈسے بھی اسی ”پوتر بھومی“( مقدس سر زمیں) پر پیدا ہوگا۔

یہ وہی پوجا شکلا ہیں جنہوں نے تین طلاق اور تعد د ازدواج سے پریشان مسلم خواتین کو ہندو مذہب اختیار کرنے کی تلقین کی تھی۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: If not godse i would have killed gandhi says judge of self styled hindu court in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply