کیرل لوو جہاد کیس:ہادیہ کی ازدواجی حیثیت کو چیلنج نہیں کیا جاسکتا:سپریم کورٹ

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے کہا ہے کہ کیرل لوو جہاد کیس میں قومی تحقیقات ایجنسی (ای آئی اے) کو ایک زبردست جھٹکا دیتے ہوئے کہا ہے کہ وہ کیرل میں جبراً تبدیلی مذہب کی اپنی تحقیقات تو جاری رکھ سکتی ہے لیکن ہادیہ کی ازدواجی حالت کیتفتیش نہیں کر سکتی کہ اس نے کس سے کیوں اور کن حالات میں شادی کی۔
چیف جسٹس آف انڈیا دیپک مشرا کی سربراہی والی جسٹس اے ایم کھانویلکر اور جسٹس ڈی وائی چندرا چوڑ پر مشتمل ایک تین ججی بنچ نے کہا کہ شادی کے لیے ہادیہ کی پسند کے معاملہ میںوہ مداخلت نہیں کرے گی۔
اس نے جس شخص سے شادی کی ہے وہ اچھا ہے یا برا اس کا فیصلہ ہادیہ خود ہی کرے گی۔ چیف جسٹس نے کہا کہ یہ ہادیہ کی اپنی ذاتی پسند تھی یا نہیں وہ بتا سکتی ہے ۔
اگر وہ عدالت میں آتی ہے اور یہ بیان دیتی ہے کہ اس نے اپنی پسند سے شادی کی ہے تومعاملہ ہی ختم ہو جاتا ہے۔ہمیں اس سے کوئی مطلب نہیں کہ کیاتحقیقات کی جا رہی ہے ۔
این آئی اے اپنی تحقیقات جاری رکھے یاکسی کو گرفتار کرے عدالت کو اس سے کوئی سروکار نہیں۔این آئی اے تفتیش کر سکتی ہے لیکن اس کی ازدواجی زندگی کی تحقیقات نہیںکر سکتی۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Hadiyas marital status cant be questioned says supreme court in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply