ہریانہ میں اجتماعی جنسی زیادتی معاملہ پر گوڑ گاؤں پولس کمشنر کو قومی حقوق انسانی کمیشن کا نوٹس

نئی دہلی: قومی انسانی حقوق کمیشن نے گڑگاؤں میں ایک عورت کی اجتماعی عصمت دری کے معاملے میں شہر کے پولیس کمشنر سے رپورٹ طلب کی ہے۔ کمیشن نے دہلی اور فرید آباد کے پولیس کمشنروں اور نوئیڈا اور غازی آباد کے سینئر پولیس افسروں سے بھی چھ ہفتے میں تجاویز مانگی ہیں کہ خواتین کے خلاف اس طرح کے جرائم کو روکنے کے لئے کیا کوئی مشترکہ منصوبہ بندی کی جا سکتی ہے۔ کمیشن نے کہا ہے کہ اس طرح کے واقعات سے یہ واضح ہو جاتا ہے کہ پولیس کی طرف سے رات کے وقت خاطر خواہ گشت نہیں لگائی جا رہے۔ کمیشن نے ہریانہ کے پولیس ڈائریکٹر جنرل کو ہدایت کی ہے کہ وہ شہریوں خاص طور پر خواتین کے تحفظ کے لئے کئے جا رہے اقدامات کا چار ہفتوں کے اندر وضاحت کریں۔ کمیشن کا کہنا ہے کہ ویسے اس معاملے میں کوئی سرکاری افسر راست طور پر شامل نہیں ہے لیکن میڈیا رپورٹوں سے ظاہر ہوتا ہے کہ قومی دارالحکومت علاقہ خاص طور پر نوئیڈا، فریدآباد اور گڑگاؤں میں خوف، عدم تحفظ اور غیر یقینی صورتحال کا ماحول ہے۔
شہریوں خاص طور پر خواتین اور بچوں کی حفاظت کو یقینی بنانا حکومت کی ذمہ داری ہے۔سیکورٹی ایجنسیوں کی طرف سے اس طرح کے واقعات کے بار بار رونما ہونے کے سلسلے کو روکنے کے لئے کچھ سخت قدم اٹھائے جانے کی ضرورت ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق گزشتہ 29 مئی کی رات گڑگاؤں میں ایک عورت کی اپنے پڑوس?وں کے ساتھ جھگڑا ہو گیا تھا۔ اس کے بعد وہ اپنے باپ کے گھر کے لئے روانہ ہو گئی۔نیشنل ہائی وے 8 پر اسے ایک ٹرک ڈرائیور نے لفٹ دی. ڈرائیور نے اسے پریشان کرنے کی کوشش کی تو وہ ٹرک سے اتر گئی۔ اس کے بعد ایک وین کے ڈرائیور اور اس میں سوار لوگوں نے اسے اپنے ساتھ بٹھا لیا اور اس سے اجتماعی جنسی زیادتی کی۔ ان لوگوں نے اس کی بچی کو بھی چھین لیاتھا اور اس کا رونا بند کرنے کے لیے اس کامنہ دبا دیا تھا ۔
فرار سے پہلے ان لوگوں نے بچی کو سڑک پر پھینک دیاتھا جس سے اس کے سر میں چوٹ آئی تھی۔اپنی زخمی بچی کو گود میں لئے یہ عورت پیدل چلتے چلتے ایک فیکٹری کے پاس پہنچی جہاں گارڈ نے اسے صبح ہونے کا انتظار کرنے کو کہا۔ صبح ہونے پر ڈاکٹر نے بچی کو دیکھنے کے بعد اسے مردہ قرار دیا۔اس کے بعدوہ عورت مردہ بچی کو گود میں لئے ہوئے میٹرو میں بیٹھ کر تغلق آباد اپنے باپ کے گھر پہنچی جہاں ایک اور ڈاکٹر نے بھی اس سے کہا کہ اس کی بچی کی موت ہو چکی ہے. اس کے بعد خاتون نے گڑگاؤں واپس آکر ایف آئی آر درج کرائی۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Gurgram gangrape nhrc notice to haryana dgp police commissioner in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply