پڑوسی ملکوں سے آئے اقلیتی فرقہ کے لوگوں کو خصوصی سہولتیں دینے کا اعلان

نئی دہلی:حکومت نے افغانستان ، بنگلہ دیش اور پاکستان سے مذہبی بنیاد پر ہراساں کیے جانے کے باعث مہاجر کے طور پر ہندوستان میں مقیم مختلف اقلیتی فرقہ کے لوگوں کے لئے شہریت کی درخواست فیس انسانی بنیاد پر زیادہ سے زیادہ پندرہ ہزار روپے سے کم کرکے صرف ایک سوروپے کردی ہے۔
اس کے ساتھ ہی حکومت نے ان ملکوں سے آئے اقلیتی ہندو، سکھ، پارسی، بودھ، جین اور عیسائی فرقہ کے لوگوں کو روزمرہ کی پریشانیوں کے مدنظر انہیں ملازمت کرنے، مکان بنانے ، جائیداد خریدنے ، بینک اکاونٹ کھولنے ، آدھار اور پین کارڈ اور ڈرائیونگ لائسنس بنانے کی بھی سہولت دی ہے۔وزیر اعظم نریندر مودی کی صدارت میں آج ہوئی کابینہ کی میٹنگ میں یہ فیصلہ لیا گیا۔ وزیر قانون روی شنکر پرساد نے میٹنگ کے بعد نامہ نگاروں کو بتایا کہ اقلیتی فرقہ کے جو لوگ ہراساں ہوکر افغانستان ، بنگلہ دیش او رپاکستان سے یہاں آئے ہیں اور طویل مدتی ویزا پر رہ رہے ہیں ان کی روز مرہ کی پریشانیوں کو دیکھتے ہوئے انسانی بنیاد پر انہیں یہ سہولیات دی گئی ہیں۔
اس سے یہ بینکوں میں اپنا کھاتہ کھول سکیں گے، ڈرائیونگ لائسنس اور آدھار او رپین کارڈ بنواسکیں گے۔ یہ لوگ اب ایک ریاست سے دوسری ریاست میں بھی آمدورفت او رقیام کرسکیں گے۔ انہوں نے کہاکہ ان لوگوں کے لئے شہریت کی درخواست فیس پندرہ ہزار روپے سے گھٹا کر 100روپے کردی گئی ہے۔ طویل مدتی ویزا کے لئے درخواست کی شرطوں کو بھی آسان بنایا گیا ہے۔
اس کے لئے شہریت قانون 2009 میں ترمیم کی گئی ہے۔سات ریاستوں کے سولہ اضلاع کے ضلعی افسران کو اس کے لئے اختیارات دئے جائیں گے۔ ضلع افسران سب ڈویزنل مجسٹریٹ سطح کے افسران کے ذریعہ سے درخواست دہندہ کو ملک کے تئیں وفاداری کا حلف دلایا جائے گا۔
یہ افسران چھتیس گڑھ کے رائے پور، گجرات کے احمد آباد، گاندھی نگر او رکچھ، مدھیہ پردیش کے بھوپال اور اندور، مہاراشٹر کے ناگپور، ممبئی، پونے او رتھانے، راجستھان کے جودھپور ، جیسلمیر او رجے پور، اترپردیش کے لکھنؤ اور دہلی کے جنوبی اور مغربی اضلاع کے کلکٹروں کو دئے گئے ہیں۔ (یو این آئی)

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Facilities granted to minorities coming from neighbour country in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply