ہندوستان کی سیکورٹی فورسز میں80فیصد افسران کرپٹ ہیں: برطرف کانسٹبل تیج بہادر کا دعویٰ

نئی دہلی: سیکورٹی فورسز کی طویل تحقیقات کے بعد بارڈر سیکورٹی فورس (بی ایس ایف)سے برطرف کیے جانے والے کانسٹبل تیج بہادر یادو کا کہنا ہے کہ فورسز میں 80 فیصد افسران کرپٹ ہیں۔ چھتیس گڑھ کے سکما میں نکسلی حملے میں شہید ہونے والے25سی آر پی ایف اہلکاروں کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے ممبئی میں ہونے والی ایک تقریب میں مہمان خصوصی کے طور پر شرکت کرتے ہوئے تیج بہادر نے کہاکہ حکومت فوجیوں کو 18 مختلف کھانے بھیجتی ہے لیکن انتظامیہ کی جانب سے سپاہیوں کوزیادہ تر صرف کھچڑی دی جاتی ہے اور مجھے یہی سچ بولنے کی سزا دی جارہی ہے۔ تقریب میںانہوں مزید کہا کہ سسٹم ہی کرپٹ ہے لیکن تمام افسران نہیں، فورسز میں 80 فیصد افسران کرپٹ ہیں۔
واضح رہے کہ سابق سپاہی تیج بہادر نے ناقص کھانے کی شکایت کی تھی جس کے بعد سے اسکے خلاف انکوائری کا سلسلہ شروع ہوا اور اسے نوکری سے بھی برطرف کردیا گیا جبکہ تیج بہادر نے دیگر سابق سپاہیوں کے ساتھ مل کر 14 مئی کو اس اقدام کے خلاف ایک روزہ احتجاج کا اعلان کر رکھا ہے۔جہاں وہ حکومت کو ایک الٹی میٹم دیںگے کہ وہ مسلح فورسز میں زبردست کرپشن کو دور کرنے کے اقدامات کرے۔اس دھرنے میں بقول تیج بہادر ، سی آر پی ایف اور آئی ٹی بی پی کے علاوہ بری، بحری اور فضائی فوج کے سابق اہلکار بھی شامل ہوںگے۔

Title: ex bsf constable tej bahadur yadav accuses 80 officers in armed | In Category: ہندوستان  ( india )
Tags: ,

Leave a Reply