انتخابات میں مذہب، ذات سے متعلق سپریم کورٹ کے فیصلے سے کمیشن کے ہاتھ مضبوط ہوئے ہیں:نسیم زیدی

نئی دہلی: (یو این آئی) چیف الیکشن کمشنر نسیم زیدی نے کہا کہ انتخابات میں مذہب، ذات اور فرقہ کے ناموں کے استعمال پر روک لگانے سے متعلق سپریم کورٹ کے فیصلے سے کمیشن کے ہاتھ مزید مضبوط ہوئے ہیں اور وہ عدالت کے اس فیصلے کو نافذ کرنے کے لئے مکمل طور پر پرعزم ہیں اور اس کے لئے ہدایات تیار کی جارہی ہیں۔ ڈاکٹر نسیم زیدی نے پانچ ریاستوں کے اسمبلی انتخابی پروگرام کا اعلان کرتے ہوئے صحافیوں کے ایک سوال کے جواب میں یہ اظہار خیال کیا لیکن انہوں نے انتخابات کے دوران پارلیمنٹ کے بجٹ اجلاس شروع ہونے کے بارے میں سیاسی جماعتوں کے اعتراضات پر اور اتر پردیش میں سماج وادی پارٹی کے دو خیموں کے درمیان انتخابی نشان کی دعویداری کے بارے میں پوچھے جانے پر کوئی فیصلہ کن جواب نہیں دیا۔ یہ دریافت کئے جانے پر کہ انتخابات کا اعلان ہونے کے بعد جب آج سے ضابطہ اخلاق نافذ ہو گیا ہے، تو ایسے میں یکم فروری کو مرکزی حکومت کا عام بجٹ کس طرح پیش کیا جائے گا جبکہ اس میں عوامی مقبولیت کے کئی طرح کے اعلانات ہوتے ہیں، ڈاکٹرنسیم زیدی نے کہا کہ چند سیاسی جماعتوں کے نمائندوں نے انہیں ایک میمورنڈم دیا ہے اور کمیشن اس کا مطالعہ کر رہا ہے۔ الیکشن کمیشن اس سلسلے میں مناسب وقت پر فیصلہ کرے گا۔
سماج وادی پارٹی کے انتخابی نشان پر تنازعہ کے بارے میں پوچھے جانے پر چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ گزشتہ دو تین دنوں میں سماجوادی پارٹی کے دو گروپوں کی جانب سے انہیں اس سلسلے میں میمو رنڈم ملے ہیں۔ پہلا میمو مسٹر ملائم سنگھ یادو کی جانب سے ملا اور دوسرا مسٹر رام گوپال یادو اور مسٹر اکھلیش یادو کی جانب سے موصول ہو اہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ ان دونوں میمورنڈم کا مطالعہ کرنے کے بعد مقررہ طریقہ کار اور پرانی روایات کو مد نظر رکھتے ہوئے مناسب وقت پر فیصلہ کریں گے۔ اس سوال پر کہ اس بارے میں فیصلے کرنے میں کتنا وقت لگے گا اور کیا الیکشن کمیشن سماج وادی پارٹی کے موجودہ انتخابی نشان سائیکل کو ضبط کر کے دونوں دھڑوں کو الگ الگ انتخابی نشانات تفویض کرے گا، انہوں نے کوئی تبصرہ نہیں کیا۔ یہ دریافت کئے جانے پر کہ سپریم کورٹ نے گزشتہ دنوں انتخابات میں مذہب، ذات اور فرقہ کے ناموں کا استعمال کرنے پر روک لگانے کے لئے جو فیصلہ دیا ہے، اسے الیکشن کمیشن کس طرح نافذ کرے گا؟، ڈاکٹر زیدی نے کہا کہ الیکشن کمیشن اس فیصلے کو نافذ کرنے کے لئے مکمل طور پر پرعزم ہے۔انہوں نے کہاکہ “ہم سپریم کورٹ کے فیصلے پر عمل کریں گے اور اسے نافذ کرنے کے لئے نئے سرے سے ہدایات تیار کر رہے ہیں”۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ سپریم کورٹ کے اس فیصلے سے کمیشن کے ہاتھ پہلے سے زیادہ مضبوط ہوئے ہیں اور کمیشن اس فیصلے پر سختی سے عمل کرے گا۔ انہوں نے تمام سیاسی جماعتوں، امیدواروں اور ان کے کارکنوں سے بھی اپیل کی کہ وہ سپریم کورٹ کے اس فیصلے پر عمل کریں۔
انہوں نے کہا کہ وہ ان سیاسی پارٹیوں سے توقع بھی کرتے ہیں کہ وہ اس پر عمل کریں گی۔ انہوں نے نوٹ بندی اور کالے دھن کے بارے میں پوچھے سوال پر کہا کہ آنے والے انتخابات میں کالے دھن کے استعمال پر مکمل روک لگے گی اور امکان ہے کہ اس بار الیکشن میں کالے دھن کا کم استعمال ہوگا۔ تاہم، انہوں نے یہ خدشہ بھی ظاہر کیا کہ دولت کے بجائے دیگر اقسام میں ووٹروں کو لالچ دینے کے طریقے اپنائے جا سکتے ہیں۔ ڈاکٹر نسیم زیدی نے بتایا کہ سیاسی پارٹیوں کو 20 ہزار روپے سے زیادہ رقم کا چندہ لینے پر چیک لینا پڑتا ہے لیکن اب کمیشن نے اس رقم کی حد دو ہزار روپے کرنے کی سفارش کی ہے۔ یہ کہے جانے پر کہ دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے پنجاب اور گوا میں ووٹ ایک ہی دن کرائے جانے پر اعتراض کیا ہے، انہوں نے کہا کہ انتخابات کے پروگرام کا اعلان کرنے سے پہلے تمام سیاسی پارٹیوں سے تبادلہ خیال کیا گیا اور تمام پہلوؤں کو توجہ میں رکھتے ہوئے یہ فیصلہ کیا گیا ہے اور یہ فیصلہ تمام سیاسی جماعتوں کے لئے قابل اطلاق ہے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Ec to implement sc ruling on caste religion in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply