حکومت گؤ رکشا کے نام پر پیٹ پیٹ کر ہلاک کرنے والوں کی حمایت نہیں کرتی

نئی دہلی:مرکزی حکومت نے سپریم کورٹ میں کہا ہے کہ وہ گؤ رکشا کے نام پر قانون اپنے ہاتھ میں لے کر بے قصور لوگوں کو مشتعل بھیڑ کے ہاتھوں پیٹ پیٹ کر ہلاک کرنے کی کارروائی کو نہ تو پسند کرتی ہے اور نہ ہی کبھی ایسی حرکتوں کی حمایت کرے گی اور نہ ہی جائز ٹہرائے گی ۔ یہ کہتے ہوئے سالسٹر جنرل رنجیت کمار نے یہ بھی کہا کہ امن و قانون سنبھالنے کی ذمہ داری ریاستوں کی ہے۔ اور انہیں چاہیئے کہ وہ اس قسم کی وارداتوں کو نہ ہونے دیں۔
مرکزی حکومت نے جسٹس دیپک مشرا کی صدارت والی بنچ کو بتایا کہ وہ کسی بھی ریاست میں کسی بھی طرح کے گؤرکشا گروپوں کی حمایت نہیں کرتی ہے۔ مرکزی حکومت نے عدالت عظمیٰ کو بتایا کہ ملک میں کسی بھی قسم کے خود ساختہ گؤ رکشا گروپوں کا کوئی مقام نہیں ہے اور قانون ہاتھ میں لینے والوں کے خلاف مناسب کارروائی کی گئی ہے۔ بی جے پی کی زیر حکومت گجرات اور جھارکھنڈ کے علاوہ کرناٹک نے بھی عدالت کو مطلع کیا کہ گﺅ رکشا سے متعلق تشدد میں ملوث ملزمان کے خلاف کارروائی کی گئی ہے۔
معاملے کی آئندہ سماعت کی تاریخ چھ ستمبر مقرر کی گئی ہے۔واضح رہے کہ مرکز اس عذر داری کا جواب دے رہی تھی جو تحسین پونہ والا نے داخل کی ہے جس میں عدالت سے استدعا کی گئی تھی کہ نام نہاد گؤ رکشکوں کے خلاف کارروائی کرنے کے لیے حکومت اور کچھ ریاستوں کو ہدایت جاری کی جائے۔

Title: do not support cow vigilantism states must act modi govt tells supreme court | In Category: ہندوستان  ( india )

Leave a Reply