اوما اور کلیان کو اپنے عہدوں سے مستعفی اور آڈوانی اور جوشی کو سیاست سے کنارہ کش ہو جانا چاہئے: کمیونسٹ پارٹی

نئی دہلی : بابری مسجد انہدام معاملے میں سپریم کورٹ کے فیصلے کے کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا نے آبی وسائل کی مرکزی وزیر اومابھارتی کے استعفیٰ کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ انہیں اور راجستھان کے گورنر کلیان سنگھ کو اخلاقی بنیادوں پر مستعفی ہوجانا چاہئے اور لال کرشن اڈوانی اور مرلی منوہر جوشی کو بھی سیاست سے سنیاس لے لینا چاہئے۔ پارٹی کے سینئر لیڈر اتل کمار انجان نے سپریم کورٹ کے فیصلے پر خبر رساں ایجنسی یو این آئی سے کہا کہ ملک کی عدالت عظمیٰ نے ان لوگوں کے خلاف مجرمانہ سازش کا مقدمہ چلانے کی اجازت دے دی ہے۔ اس لئے محترمہ بھارتی کو تو فوراً استعفیٰ دے دینا چاہئے اور مسٹر کلیان سنگھ کو بھی اخلاقی بنیادوں پر استعفی دے دینا چاہئے۔
انہیں دفعہ 261 کے تحت کسی طرح کی کوئی چھوٹ نہیں ملنی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ محترمہ بھارتی نے بابری مسجد انہدام کے لئے نہ صرف اشتعال پھیلایا بلکہ مسجد کے گرنے کے بعد بھی انہوں نے خوشی کا اظہار کیا تھا۔ ملک اس واقعہ کونہیں بھول پایا ہی اس لئے انہیں فوراً استعفیٰ دے دینا چاہئے۔ انہوں نے کہاکہ اترپردیش کے اس وقت کے وزیر اعلیٰ کلیان سنگھ نے سپریم کورٹ میں یہ حلف نامہ دیا تھا وہ مسجد کی حفاظت کریں گے اور بین ریاستی کونسل میں بھی انہوں نے یہ وعدہ کیا تھا کہ وہ مسجد کی حفاظت کریں گے لیکن وہ اپنے وعدے کو پورا نہ کرسکے۔ اس لئے انہیں اخلاقی بنیاد پر استعفیٰ دے دینا چاہئے۔
انہوں نے کہا کہ جین حوالہ معاملے میں اڈوانی جی نے استعفیٰ دے دیا تھا لیکن یہ معاملہ تو اس سے بھی سنگین ہے اس لئے اڈوانی جی کو تو اب عوامی زندگی سے سنیاس لے لینا چاہئے۔ اسی طرح مسٹر جوشی کو بھی استعفیٰ دے دینا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ عدالت نے بہت اچھا فیصلہ دیا ہے۔ عدالت کو فوراً سماعت کرکے قصورواروں کو سز ا دینی چاہئے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Cpi demands uma bharti and kalyan singhs resignation in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply