اتر پردیش،جھار کھنڈ اور بہار میں درگا وسرجن کے موقع پر فرقہ وارانہ تشدد ، کئی زخمی،کرفیونافذ

نئی دہلی: اتر پردیش،جھارکھنڈ اور بہار کے کچھ اضلاع میںدرگا مورتی وسرجن کے دوران تشدد پھوٹ پڑا جس میں کم از کم کئی افراد زخمی اور کئی گاڑیاں نذر آتش ہو گئیں۔

اترپردیش کے کانپور ضلع کے پرم پروا علاقہ میں اس وقت ہندو مسلم جھگڑا ہو گیا جب مسلمانوں نے ہندو اکثریتی علاقہ سے جہاں دسہرے کی تقریب منائی جارہی تھی محرم کا جلوس لے جانے کی کوشش کی۔ مشتعل بھیڑ نے ایک دوسرے پر پتھراو¿ کیا جس میں6افراد زخمی ہو گئے۔ پولس نے فوری کارروائی کرتے ہوئے حالات پر قابو پایا اور پولس کی زبردست جمیعت وہاں تعینات کر دی گئی۔

کانپورضلع کے ہی راوت پور گاو¿ں میں بھی اسی نوعیت کی واردات ہوئی ۔لیکن بعد میں حالات پر قابو پالیا گیا۔بلیا میں درگا پوجا پنڈا ل میں ہندو مسلم ٹکراو¿ ہو گیا ۔جس میں 6افراد زخمی ہو گئے۔ پولس نے حالات بے قابو ہوتے دیکھ کر کرفیو نافذ کر دیا۔یہ واقعہ شہر کے سکندر پور علاقہ میں پیش آیا۔جس میں دو بچوں میں ہوئے جکھگڑے نے فرقہ وارانہ متشدد کی شکل اختیار کر لی۔

جھارکھنڈ کے پلاماو¿ ضلع کے چانڈو اور بکوریا گاوو¿ں میں ہندوو¿ں کی دیوی درگا ماتا کو دریا برد کرنے کے جلوس کے دوران فرقہ وارانہ تشدد ہو گیا جس میں 11 سے زائدافراد زخمی ہو گئے اور مشتعل بھیڑ نے 10گاڑیوں کو نذر آتش کر دیا۔ پلاماو¿ کے پولس سپرنٹنڈنٹ اندر جیت مہتہ نے ڈپٹی کمشنر پولس شانتا نو اگراہری کے ساتھ ایک مشترکہ پریس کانفرنس میں کہا کہ دونوں گاوو¿ں میں دفعہ 144کے تحت امتناعی ا حکامات نافذ کر دیے گئے ہیں۔سرکاری ذرائع کے مطابق ضلع میں حالات کشیدہ مگر پوری طرح قابو میں بتائے جاتے ہیں۔ ابھی تک 10افراد کی گرفتاری عمل میں آچکی ہے۔

بہار کے دارالخلافہ پٹنہ سے موصول اطلاع کے مطابق سیتا مڑھی ضلع میں ہفتہ کی صبح درگا مورتی کو دریامیں بہانے کی مذہبی تقریب کے موقع پر دو فرقوں میں تنازعہ مہوجانے پر فرقہ وارانہ کشیدگی پیدا ہو گئی جس کے پیش نظر پولس نے احتیاطی تدابیر کے طور پر دفعہ144نافذ کر دی۔بتایا جاتا ہے کہ شہر کے مدھوبن علاقہ میں ہندو لوگ درگا کی مورتی کو دریا برد کرنے لے جارہے تھے کہ د وسرے فرقہ کے کچھ لوگوں نے ان پر پتھراو¿ کر دیا۔جس کے بعد دونوں طرف سے پتھراو¿ شروع ہو گیا جو رک رک کرکئی گھنٹے تک ہوتا رہا۔جس میں کئی افراد کو گہری چوٹیں آئیں اور وہاں حالات پر قابو پانے پہنچیہ پولس کی گاڑیوں کو بھی نقصان پہنچا۔تشدد پر آمادہ ہجوم نے وہاں سے گذر رہی اور کھڑی پرائیویٹ گاڑیوں ، کاروں اور موٹر سائیکلوں آگ لگا دی۔ پولس نے متصادم بھیڑکو منتشر کرنے کے لیے ہوائی فائرنگ کی اور اشک آور گولے بھی داغے۔حالات پر قابو پانے کے لیے آس پاس کے اضلاع مظفر پور اور دربھنگہ سے ایڈیشنل پولس سیتا مڑھی بھیج دی گئی۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Communal clashes in up bihar jharkhand leave over 12 injured in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News
What do you think? Write Your Comment