بھوپال انکاؤنٹر کی سپریم کورٹ کے کسی سابق جج سے تحقیقات کرائی جائے:بدر الدین اجمل

نئی دہلی:آل انڈیا یونائیٹڈ ڈیمو کریٹک فرنٹ کے قومی صدر و رکن پارلیمنٹ مولانا بدرالدین اجمل نے بھوپال جیل سے فرار ہونے کے الزام میں آٹھ مشتبہ سیمی ارکان کے انکاؤنٹر پر اپنے رد عمل میں کہا ہے کہ جن حالات میں یہ واقعہ پیش آیا ہے اور اس کی جو ویڈیو میڈیا میںآئی ہے اس نے بہت سے سوال کھڑے کر دیے ہیں اس لئے سپریم کورٹ کی نگرانی میں اس پورے واقعہ کی تحقیقات کرائی جائے تاکہ حقیقت لوگوں کے سامنے آسکے۔
مولانا نے کہا کہ اگر وہ مجرم تھے تو عدالت کے فیصلہ کے مطابق انہیں ضرور سزا ملنی چاہئے تھی انہوں نے کہاکہ مختلف طبقات سے تعلق رکھنے والے ملک کے دانشوارن،رہنما اور ماہرین اس انکاؤنٹر پر اپنے شبہ کا اظہار کر رہے ہیں کیوں کہ پہلی نظر میں ہی یہ انکاؤنٹر فرضی لگتا ہے اور ایسا معلوم ہوتا ہے کہ ان لوگوں کو جیل سے لاکر اس سنسان جگہ پر چھوڑ دیا گیا ہو اس کے بعد ان پر گولیاں چلائی گئی۔
انہوں نے کہا کہ ایسا پہلی مرتبہ نہیں ہوا ہے بلکہ ماضی میں ایسے کئی واقعات پیش آچکے ہیں جن میں مسلم قیدیوں کو انکاؤنٹر کے نام پر ہلاک کیاگیا ہے جس میں گزشتہ سال تلنگانہ میں سات زیر سماعت مسلم قیدیوں کو جیل سے منتقلی کے دوران قتل کیا جانا شامل ہے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Bhopal encounter raises several questions says badruddin ajmal in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply