اجودھیا میں متنازعہ مقام سے کچھ دوری پر مسلم اکثریتی علاقہ میں مسجد بنائی جا سکتی ہے:شیعہ وقف بورڈ

نئی دہلی: شیعہ وقف بورڈ نے سپریم کورٹ کو مطلع کیا ہے کہ اجودھیا میں متنازعہ مقام سے کچھ مناسب دوری پر واقع مسلم اکثریتی علاقہ میں مسجد کی تعمیر کی جا سکتی ہے۔وقف بورڈ نے دعویٰ کیا کہ متنازعہ اراضی کا جو ایک حصہ اجودھیا مقدمہ میں ایک فریق شیعہ وقف بورڈ کو دیا گیا ہے وہ وقف بورڈ کی ہے۔
ایک حلف نامہ میں کہا گیا ہے کہ چونکہ بابری مسجد شیعہ وقف بورڈ کی املاک ہے اس لیے اتر پردیش کا شیعہ سینٹرل وقف بورڈ ہی دیگر فریقوں کے ساتھ پر امن تصفیہ کے لیے اکیلے مذاکرات کرنے کا اہل ہے۔
تنازعہ کے پر امن تصفیہ کے لیے شیعہ وقف بورڈ نے عدالت سے استدعا کی کہ کسی ریٹائرڈ سپریم کورٹ جج کی سربراہیمیں ایک پینل تشکیل دے۔ اس پینل میں وزیر اعظم نریندر مودی اور اتر پردیش کے وزیر اعلیٰ یوگی ادتیہ ناتھ کے مقرر کردہ اراکین کو شامل کیا جائے۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Babri masjid demolition case shia waqf board says mosque can be built in muslim dominated area in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply