نوٹوں کی منسوخی سے متوسط طبقہ کو مکانات سستے دام میں ملنے لگیںگے:ارون جیٹلی

نئی دہلی:حکومت نے دعویٰ کیا ہے کہ نوٹوں کی منسوخی کا اثر عارضی رہے گا اس سے مکانوں کی قیمتوں میں کمی آئے گی اور متوسط طبقے کو سستے مکان ملیں گے۔ مرکزی وزیر خزانہ ارون جیٹلی نے آج پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں میں اقتصادی سروے 2017 پیش کرتے ہوئے کہا کہ نوٹوں کی منسوخی کا مجموعی گھریلوپیداوار (جی ڈی پی)کی شرح نمو پر پڑ رہا منفی اثر عارضی رہے گا۔ حکومت نے کہا ہے کہ مارچ 2017 کے آخر میں یا اپریل 2017 تک بازار میں نقد رقم کی فراہمی کی معمول کی سطح پر پہنچ جانے کا امکان ہے۔
اس کے بعد معیشت میں دوبارہ عام صورت حال ہو جائے گی۔ 18-2017میں جی ڈی پی کی شرح نمو 6.75 فیصد سے لے کر 7.5 فیصد تک رہنے کا اندازہ ہے۔ اقتصادی سروے میں کہا گیا ہے کہ نوٹوں کی منسوخی کامختصر مدت اور طویل مدتی منفی اثر اور فائدہ دونوں ہی ہوں گے۔ نوٹوں کی منسوخی سے پڑنے والے منفی اثرات میں نقد رقم کی فراہمی میں کمی اور اس کے نتیجے میں جی ڈی پی میں اضافہ میں عارضی کمی شامل ہے، جبکہ اس کے فوائد میں ڈیجیٹلائیزیشن میں اضافہ، نسبتاً زیادہ ٹیکس کی ادائیگی اور رئیل اسٹیٹ کی قیمتوں میں کمی شامل ہیں، جس سے ٹیکس آمدنی کے کلیکشن اور جی ڈی پی کی شرح دونوں میں ہی اضافہ ہونے کا امکان ہے۔

Title: arun jaitley presents the economic survey 2016 17 | In Category: ہندوستان  ( india )

Leave a Reply