جنگی لیاقت بڑھانے کے لیے مودی کابینہ نے کئی سفارشات کو منظوری دی

نئی دہلی: حکومت نے فوج کے سسٹم میں اصلاحات نافذ کرنے اور خرچ کو متوازن بنانے کے مقصد سے آزادی کے بعد سب سے بڑا قدم اٹھاتے ہوئے فوج کے غیر ضروری محکموں کو بند کرنے اور بعض شعبوں کو آپس میں ضم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ فوج کی جنگی صلاحیت کو بڑھانے کے لئے تقریبا 60 ہزار افسران اور فوجیوں کو ضرورت کے مطابق جنگی کردار میں تعینات کیا جائے گا۔ وزیر اعظم نریندر مودی کی زیر صدارت آج یہاں مرکزی کابینہ کے اجلاس میں فوج کے ورکنگ سسٹم میں اصلاحات اور اخراجات میں توازن کے بارے میں تجاویز دینے والی کمیٹی کی 65 سفارشات کو منظوری دے دی ہے۔ اجلاس کے بعد وزیر دفاع ارون جیٹلی نے صحافیوں کو بتایا کہ ریٹائرڈ لیفٹیننٹ جنرل ڈی بی شیتکر کی سربراہی میں گزشتہ سال ایک کمیٹی قائم کی گئی تھی۔ اس کمیٹی نے دسمبر میں اپنی رپورٹ پیش کی ہے، جس میں 99 سفارشات کی گئی ہ?ں، جن میں سے 65 سفارشات کو وزارت دفاع نے قبول کرلیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ سفارشات مرحلہ وار نافذ کی جائیں گی اور انہیں 2019 کے آخر تک مکمل طور پر نافذ کردیا جائے گا۔ ان کے نافذ ہونے سے 57 ہزار افسران اور جوانوں کو جنگی کرداروں اور آپریشنوں نیز دیگر کاموں میں لگایاجائے گا۔ کچھ محکموں سے وابستہ سول ملازمین کو مسلح افواج کی دیگر شعبوں میں بھیجا جائے گا تاکہ وہ کارکردگی کو بڑھا سکیں۔ انہوں نے کہا کہ وزیر دفاع کے طور پر انہوں نے کمیٹی کی اس رپورٹ اور اس کے نتائج سے متعلق فوج اور دیگر متعلقہ فریقوں کے ساتھ تفصیل سے تبادلہ خیال کیا ہے۔ سفارشات میں سب سے بڑا فیصلہ فوجی ڈاک گھروں اور فوجی فارموں کوبند کرنے کے بارے میں کیا گیا ہے۔ ابھی فوج کے 39 فوجی فارم ہیں جنہیں اب مرحلہ وار بند کردیا جائے گا۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Army to restructure 57000 posts of officers other staff in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply