تیزاب حملہ میں زندہ بچ جانے والی لڑکی کا نظم کے ذریعہ اظہار کرب

نئی دہلی:ایسڈ حملہ نہایت سنگین سماجی جرم ہے جو کسی کی بھی زندگی تباہ کر سکتا ہے ۔اور متاثرہ شخص خواہ وہ مرد ہو یا عورت ایک زندہ لاش نظر آتی ہے۔
ویسے تیزاب پھینکنے میں جھلس جانے والی 99فیصد تعداد لڑکیوں کی ہی ہوتی ہے جن پر وہ ناخلف و ناہنجار و بد کردار لڑکے تیزاب پھینک کر انہیں ایسا بنا دیتے ہیں کہ وہ موت کی تمنا کرکرنے لگتی ہیں۔اس موضوع پر سوشل میڈیا میں ایک جدید نظم بہت پسند کی جارہی جس میں جب لڑکی نے ایک لڑکے کی محبت قبول نہیں کی تواس نے جھلا کر لڑکی کے چہرے پر تیزاب پھینک دیا۔
اس” تیزاب حملہ“ کی شکار ا س لڑکی نے جس دردبھرے انداز میں اس لڑکے سے شکوہ کیا ہے اسے پڑھ کر ہر شخص کا دل کانپ اٹھے گا ۔

چلو پھینک دیا سو پھینک دیا
اب قصور بھی بتا دو میرا
تمہارا اظہار تھا، میرا انکار تھا
بس اتنی سی بات پر پھونک دیا تم نے چہرا میرا
غلطی شاید میری تھی
پیار تمہارا دیکھ نہ سکی
اتنا پاک پیار تھا
کہ اس کو میں سمجھ نہ سکی
اب اپنی غلطی مانتی ہوں
کیا اب تک اپناؤگے مجھے
کیا اب اپنا بناؤ گے مجھے
کیا اب سہلاؤگے میرے چہرے کو
جن پر اب پھپھولے ہیں
میری آنکھوںمیں آنکھیں ڈال کر دیکھو گے؟
جن کی پلکیں ساری جل چکی ہیں
چلاؤگے اپنی انگلیاں میرے گالوں پر؟
جن پر پڑے چھالوں سے اب پانی نکلتا ہے
ہاں شاید تم کر لوگے
تمہارا پیار تو سچا ہے نا؟
اچھا ایک بات تو بتاؤ
یہ خیال تیزاب کا کہاں سے آیا؟
کیا کسی نے تمہیں بتایا؟
یا ذہن میں تمہارے خود ہی آیا؟
اب کیسا محسوس کرتے ہو
تم مجھے جلا کر
فخر؟
یا پہلے سے زیادہ
اور بھی مردانہ؟
تمہیں پتہ ہے
صرف میرا چہرہ جلا ہے
جسم ابھی باقی ہے
ایک صلاح دوں۔۔۔۔
تیزاب کا ایک تالاب بناؤ
پھر اس میں مجھ سے چھلانگ لگواؤ
جب پوری جل جاؤں گی
پھر شاید تمہارا پیار مجھ میں
اور گہرا اور سچا ہوگا

ایک دعا ہے۔۔۔۔
اگلے جنم میں
میں تمہاری بیٹی بنوں
اور پھر مجھے تمہارا جیسا عاشق ملے
شاید تم پھر سمجھ پاؤگے
تمہاری اس حرکت سے
مجھے اور میرے ماں باپ کو
کتنا درد سہنا پڑا ہے۔۔۔۔۔
تم نے میرا پورا جیون
برباد کر دیا ہے

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: A poem describing the pain of acid attack survivor girl in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply