ملک میں ایک ہی میرج ایکٹ ہونا چاہئے،مسلم خواتین تین طلاق کے رواج سے خود کو غیر محفوظ سمجھتی ہیں: روپا گنگولی

کولکاتا:بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کی ممبر پارلیمنٹ روپا گنگولی نے کہا ہے کہ شادی کے حوالے سے ایک ملک میں ایک ہی قانون ہونا چاہئے نیز مسلم خواتین تین طلاق کے رواج کے باعث خود کو غیر محفوظ محسوس کرتی ہیں۔
انہوں نے سیاسی جماعتوں پر مسلمانوں کو ووٹ بینک کے طور پر استعمال کرنے کا بھی الزام لگاتے ہوئے مسلمانوں سے اعلیٰ تعلیم کے حصول کے لئے آگے آنے کی اپیل کی۔ انہوں نے یکساںسول کوڈ کے خلاف مسلمانوں کے احتجاج کو افسوسناک بتاتے ہوئے اس معاملے میں وزیر اعلی ممتا بنرجی کو بھی اپنا موقف سامنے لانے کی ضرورت پر زور دیا۔تین طلاق کے تنازعے کو حیران کن بتاتے ہوئے انہوں نے کہا کہ طلاق کے حوالے سے مسلم خواتین کو انصاف بہم پہنچانے کے لیے شرعی قوانین سے الگ ہٹ کر دستور ہند میں خواتین کو آواز بلند کرنے کی گنجائش نکالی جائے۔
انہوں نے کہا کے اگر کوئی شرعی قوانین پرعمل کرتا ہے تو اس کا احترام ہونا چاہئے تاہم اگر کوئی دستور ہند کے تحت آواز اٹھائے تو اسے بھی حق ملنا چاہئے۔ انہوں نے صوبائی حکومت پر بنگلہ دیش کی انتہا پسند تنظیموں کو ریاست میں پناہ دینے کا الزام لگاتے ہوئے مغربی بنگال میں بڑھتے تشدد کے لئے ریاستی حکمراں جماعت ترنمول کانگریس کو ذمہ دار بتایا۔
بنگلہ دیش میں عوامی لیگ کے زیر اہتمام منعقد ایک پروگرام میں شرکت کے لئے گئیں روپا گنگولی نے بنگلہ دیش دورے کو اہم بتاتے ہوئے بنگال و بنگلہ دیش کے مابین ریل سروس کے بہتر ہونے کی امید کا اظہار کیا۔

Read all Latest india news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from india and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: A country should have one law on marriage says roopa ganguly in Urdu | In Category: ہندوستان India Urdu News

Leave a Reply