بلڈ پریشر اور بلڈشوگر سے گردے متاثر ہو سکتے ہیں

نئی دہلی: بلڈ پریشر اور بلڈ شوگرکی بیماری میں احتیاط نہ برتی گئیتو ہمارے گردوں کا نظام عمل بری طرح متاثر ہو سکتا ہے یہاں تک کہ گردے خراب بھی ہو سکتے ہیں۔ اور ڈیلسس پر انحصار کرنا پڑسکتا ہے یا گردے کی پیوندکاری کرانا پڑ سکتی ہے۔
انڈین میڈیکل ایسوسی ایشن (IMA)کے بیان میں کہا گیا ہے کہ ذیابیطس اور ہائیپرٹینشن دو ایسی پریشانیاں ہیں جو دائمی گردے کی مرض کے خاص وجہ ہیں۔ ہائی بلڈ پریشر اور ہائی بلڈ شوگر پر قابو کر کے CKD کے 50فیصد معاملوں اور اس سے جڑی صحت کی پریشانیوں سے بچا جا سکتا ہے جس میں جان جانے کا بھی اندیشہ ہوتا ہے۔ عام طور پر متاثرہ گردے کی علامتیں نظر نہیں آتے اور اچانک کبھی بلڈ یا پیشاب کی جانچ کروانے سے اس کا پتہ چلتا ہے۔
اس بارے میں آئی ایم اے سے سند یافتہ جنرل سیکریٹری ڈاکٹر کے کے اگروال نے کہا کہ گردے کا مرض ایک خاموش مرض ہے، جو ایک عام شخص کی زندگیکے معیار برباد کر دیتا ہے۔ اس لئے ضروری ہے کہ گردے کے مرض کی جانچ جلد ی ہو جائے تاکہ اس کا علاج ہو سکے۔ انہوں نے کہا کہ اگر اپنے کمسے کم بلڈ پریشر اور بھوکے پیٹ ذیابیطس 80فیصد پر بنائے رکھیں توہم اپنے گردوں کی حفاظت کرسکتے ہیں۔ وزن کو اعتدال میں رکھیں۔ ہر سال گردے کی جانچ کروائیں اور ڈاکٹر سے EGFRٹیسٹ کے لئے کہیں۔ گردے کے نقصان کی جانچ جلد سے جلد کروائیں۔

Read all Latest health news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from health and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Sugar and bp can lead to kidney disease in Urdu | In Category: صحت Health Urdu News

Leave a Reply