نوجوانوں میں نیند کی کمی صحت کے لیے نہایت مضر

نئی دہلی: ایک نئی طبّی تحقیق کے مطابق نوجوانوں میں نیند کی کمی دل کی صحت اور خون کی شریانوں کو متاثر کرتی ہے۔ تحقیق میں 1999سے 2002کے دوران رجسٹرڈ 2 ہزار سے زیادہ خواتین اور ان کے بچوں کو شامل کیا گیا، نتائج سے یہ بات سامنے آئی کہ تمام نوجوانوں کا نیند کا اوسط دورانیہ یومیہ 441 منٹ یا 7.33 گھنٹے رہا۔تحقیق کے مطابق 11 سے 13 برس کے بچوں کو روزانہ اوسطا 9 گھنٹے اور 14 سے 17 برس کے نوجوانوں کو روزانہ اوسطا 8 گھنٹے کی نیند لینے کی ہدایت کی جاتی ہے۔

محققین نے دیکھا کہ تحقیق میں شریک 31% افراد روزانہ 7 گھنٹوں سے کم سو رہے ہیں جب کہ 58% اعلی درجے کی نیند سے لطف اندوز نہیں ہو رہے۔تحقیق میں نیند کے مختصر دورانیے کو گردے اور پیٹ میں چکنائی کی ترسیب کی سطح میں اضافے، دل اور خون کی شریانوں پر تاثیر مثلا فِشار خون اور کولیسٹرول کی سطح کے ساتھ جوڑا گیا۔

اسی طرح ایک سابقہ تحقیقی مطالعے میں اس بات سے خبردار کیا جا چکا ہے کہ جو بچے اپنی عمر کے لحاظ سے مطلوب نیند کے گھنٹوں سے کم سوتے ہیں انہیں بڑے ہونے پر موٹاپے کا سامنا ہوتا ہے۔امریکی نیشنل فاو¿نڈیشن کے مطابق 4 سے 11 ماہ کے شیرخوار بچوں کو روزانہ 12 سے 15 گھنٹے اور ایک سے دو سال کی عمر کے بچوں کو روزانہ 11 سے 14 گھنٹے سونا چاہیے۔

جہاں تک 3 سے 5 برس کی عمر کے بچوں کا تعلق ہے تو انہیں روزانہ 10 سے 13 گھنٹے اور 6 سے 13 برس کے اسکول جانے والے بچوں کو روزانہ 9 سے 11 گھنٹے کی نیند لینی چاہیے۔ڈاکٹرز یہ ہدایت کرتے ہیں کہ 14 سے 17 برس کے نوجوانوں کو روزانہ 8 سے 10 گھنٹے سونا چاہیے۔امریکی محققین کی ٹیم نے اس تحقیق کے نتائج سائنسی جریدے پیڈیا ٹرکس کی تازہ ترین اشاعت میں شائع کیے ہیں۔

Title: is sleep deprivation bad for youth | In Category: صحت  ( health )

Leave a Reply