شیر خوار بچوں کو انڈے اور مونگ پھلی کھلانے سے الرجی کا خطرہ کم ہو سکتا ہے

لندن:بچوں کو ویسے تو پیدائش سے چھ ماہ تک صرف ماں کا دودھ پلانے کا مشورہ دیا جاتا ہے لیکن ایک نئی تحقیق کے مطابق چار ماہ کی عمر سے جن بچوں کو انڈے اور مونگ پھلی کھلائی جاتی ہے ان میں الرجی ہونے کا خطرہ دوسرے بچوں کے مقابلے کم رہتا ہے۔
امپیریل کالج لندن کی اس تحقیق کے مطابق جن بچوں کو چار سے چھ ماہ کی عمر کے درمیان انڈا کھلایا جاتا ہے، ان میں اسے بعد میں کھلائے جانے کے مقابلے انڈے سے متعلق الرجی کا خطرہ 46 فیصد کم ہوتا ہے۔ ایسے ہی چار سے 11 ماہ کے درمیان جن بچوں کو مونگ پھلی کھلائی جاتی ہے ان میں مونگ پھلی سے متعلق الرجی ہونے کا خدشہ دوسرے بچوں کے مقابلے 71 فیصد کم ہوتا ہے۔
کالج میں پیڈیاٹرک الرجی کے محقق ڈاکٹر رابرٹ ب?لے نے کہا کہ اس تحقیق کے نتائج بتاتے ہیں کہ بچوں کے لئے انڈے اور مونگ پھلی ان کا پہلا کھانا ہونا چاہئے لیکن زیادہ تر ڈاکٹر اس کامشورہ نہیں دیں گے۔
انہوں نے کہا کہ بچوں کے کھانے کی ہدایات کو تبدیل کرنے کی ضرورت ہے۔ڈاکٹر بیلے اور ان کے ساتھیوں نے گزشتہ 70 سالوں میں شائع شدہ 146 تحقیق کے اعداد و شمار کا مطالعہ کیا تاکہ یہ پتہ لگایا جا سکے کہ الرجی پیدا کرنے والے کھانے سے بچوں میں الرجی کا خطرہ کتنا رہا۔
مطالعہ میں سامنے آیا کہ 5.4 فیصد لوگوں کو انڈے سے الرجی ہے لیکن بچپن میں جلدی انڈے کھانا کھلانے سے ہر ایک ہزار میں سے 24 معاملوں میں کمی لائی جا سکتی ہے۔ مونگ پھلی سے 2.5 فیصد آبادی کو الرجی ہے لیکن پیدائش کے بعد جلد ہی اس کے استعمال سے ہر ایک ہزار میں سے 18 معاملے کم ہو سکتے ہے۔
زیادہ تر ہدایات میں بچوں کو چھ ماہ تک صرف ماں کا دودھ پلانے کے لئے کہا گیا ہے لیکن جو خواتین ایسا نہیں کر پاتیں وہ چار ماہ کی عمر سے ہی بچوں کو کھانے میں ٹھوس غذ ا سکتی ہے۔

Read all Latest health news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from health and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Feeding babies egg and peanut may prevent food allergy study suggests in Urdu | In Category: صحت Health Urdu News

Leave a Reply