جان نثار اختر اور ان کی شاعری۔۔۔اشعار مرے یوں تو زمانے کے لیے ہیں

معروف شاعر جاں نثار اختر یوں تو اپنی شاعری اور نغمہ نگاری سے ہی شہرہ آفاق تھے لیکن ساتھ ہی انہیں اردو کے عظیم شعراءمیں سے ایک مجاز لکھنوی کے بہنوئی،معروف کہانی کار،منظر نگار اور نغمہ نگار جاوید اختراور امریکہ مقیم ماہر نفسیات سلمان اختر کے والد ،معروف بالی ووڈ اداکارہ شبانہ اعظمی کے خسر،عصر حاضر کے مشہور شاعر کیفی اعظمی کے سمدھی اور ایک امریکی ٹیلی ویژن کے ڈائریکٹر کبیر اختر اور بالی ووڈ اداکار و ہدایت کار اور فلم ’بھاگ ملکھا بھاگ“ نام کی سوپر ہٹ فلم کے مرکزی کردار فرحان اخترکے داداہونے کا بھی اعزاز حاصل تھا۔اور اگر یہ کہا جائے کہ ان سب شخصیات کا ذکر ان کاحوالہ دیے بغیر ادھورا ہے تو غلط نہ ہوگا ۔ان کی غزلیں اورگیت کا ایک ایک لفظ آج بھی محمد رفیع، کشور کمار ، شمشاد بیگم او ر لتا منگیشکر جیسی عظیم گلوکاروں کی آوازوں میں دل کی گہرائیوں کوچھوتا ہے۔انکی ایک غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اشعار مرے یوں تو زمانے کے لیے ہیں
کچھ شعر فقط ان کو سنانے کے لیے ہیں

اب یہ بھی نہیں ٹھیک کہ ہر درد مٹا دیں
کچھ درد کلیجے سے لگانے کے لیے ہیں

سوچو تو بڑی چیز ہے تہذیب بدن کی
ورنہ یہ فقط آگ بجھانے کے لیے ہیں

آنکھوں میں جو بھر لو گے تو کانٹوں سے چبھیں گے
یہ خواب تو پلکوں پہ سجانے کے لیے ہیں

دیکھوں ترے ہاتھوں کو تو لگتا ہے ترے ہاتھ
مندر میں فقط دیپ جلانے کے لیے ہیں

یہ علم کا سودا یہ رسالے یہ کتابیں
اک شخص کی یادوں کو بھلانے کے لیے ہیں

Title: jaan nisar akhtar and his ghazal | In Category: غزلیں و شاعری  ( ghazal-poetry )

Leave a Reply