جیلر سے رضیہ سلطان کا کمال امروہی کا سفر بھلائے نہیں بھلایا جا سکتا

ممبئی: بالی ووڈ میں کمال امروہی کا نام ایک ایسی شخصیت کے طور پر یاد کیا جاتا ہے، جنہوں نے بہترین نغمہ نگار ، اسکرپٹ اور ڈائیلاگ رائٹر اور پروڈیوسر اور ڈائریکٹر کے طور پر ہندوستانی سنیما پر اپنی انمٹ چھاپ چھوڑی۔ 17 جنوری 1918 کو اترپردیش کے امروہہ میں زمیندار خاندان میں پیدا ہوئے کمال امروہی کا اصل نام ‘سید عامر حیدر کمال’ تھا۔ ابتدائی دور میں ایک اردو اخبار میں باقاعدگی سے کالم لکھا کرتے تھے. اخبار میں کچھ وقت تک کام کرنے کے بعد ان کا دل بھر گیا اور وہ کلکتہ چلے گئے اس کے بعد وہاں سے ممبئی آ گئے۔
ممبئی پہنچنے پر کمال امروہی کو کچھ فلموں میں مکالمے لکھنے کا کام ملا۔ ان میں جیلر، پکار، بھروسہ جیسی فلمیں شامل ہیں لیکن ان سب کے باوجود کمال امروہی کو وہ خاص پہچان نہیں مل پائی جس کے لئے وہ ممبئی آئے تھے۔ کمال امروہی کو اپنی شناخت قائم کرنے کیلئے تقریباً 10 سال تک فلم انڈسٹری میں جدوجہد کرناپڑی۔ ان کا ستارہ سال 1949 میں ریلیز اشوک کمار کی کلاسک فلم “محل” سے چمکا۔اشوک کمار نے کمال امروہی کو فلم محل کی ہدایت کی ذمہ داری سونپی۔ اس کے بعد انہوں نے پھر پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا اور پاکیزہ اور رضیہ سلطان جیسی کئی مقبول ترین فلمیں کیں۔وہ کے آصف کی مقبول عام فلم مغل اعظم کے 4رکنی مکالمہ نگار ٹیم میں شامل تھے۔

Read all Latest entertainment news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from entertainment and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Kamal amrohi birthday special in Urdu | In Category: انٹرٹینمنٹ Entertainment Urdu News

Leave a Reply