ہندوستان میں ایک روپے کے نوٹ کی 100ویں سالگرہ

نئی دہلی:آزادی کے بعد سے اب تک ہندوستانی کرنسی بے شمار تبدیلیوں کے دور سے گذرتی رہی ہے ۔لیکن ایک روپیہ واحد کرنسی ہے جس نے 30نومبر 2017کو سکہ رائج الوقت کی حیثیت سے اپنے 100سال پورے کر لیے۔
برطانیہ کے دور اقتدار میں 1916تک ایک روپیہ چاندی کے سکے کی شکل میں تھا۔لیکن دسری جنگ عظیم نے حالات ہی بدل دیے۔ دھات کی قلت ہوجانے کے باعث ایک روپیہ کو کاغذ کی شکل میں لایا گیا۔
کاغذ کا پہلا نوٹ 1917میں طبع ہوا۔ یہ طبع کیا جانے والا اب تک کا پہلا ا نوٹ تھا۔ 1935میں یہ نوٹ ہاتھوں سے بنائے گئے کاغذ پر تیار کیا گیا جس پر کنگ جارج کی تصویر تھی۔1934تک کسی نوٹ پر ادائیگی کا اقرار نامہ نہیںہوا کرتا تھا۔1941میں ہندوستانی روپیہ برما ( آج کا مینمار)کرنسی کے طور پربھی استعمال کی جاتی تھی۔اور اس پر لال نشان ہوا کرتا تھا۔
اور وہ صرف برما میں رائج تھا۔لیکن آزادی کے بعد جب پہلا ایک روپیہ جاری ہو تو قاعدے سے اس پر مہاتما گاندھی کی تصویر ہونا چاہیے تھی۔لیکن اس پرفقط قومی علامت ہی تھی۔1957میں ایک روپے کے نوٹ کا ڈیزائن تبدیل کر دیا گیا۔جوکئی ڈیزائنوں سے گذرتے ہوئے آج موجودہ شکل میں اپن100ویں سالگرہ منا رہا ہے۔

Title: one rupee note turns 100 here is how it transformed over the years | In Category: بزنس  ( business )

Leave a Reply