شاخِ گل میں پھول آنے سے پہلے خار آتے ہیں

گل بخشالوی

تحریک انصاف کی حکمرانی اپوزیشن کے خودپرستوں اور اُن کے چاہنے والوں کی نظر میں اُن کیلئے عذابِ جاں ہے لیکن پاکستان کو تحریک انصاف کی حکمرانی کی ضرورت ہے اس لےے کہ جب تک وطن عزیز میں علی بابا اور چالیس چوروں اور ان کے درباریوں تک کو کیفرِ کردار تک نہیں پہنچایا جائے گا پاکستان اپنے پاﺅں پر کھڑا ہوسکے گا اور نہ ہی ٹماٹر سستے ہوں گے ۔

کہ مولانا فضل الرحمان نے پہلی APCمیں ایک قومی مجرم کو ملک سے باہر بھجوانے کے لئے راہ ہموار کی اور دوسری APCمیں دوسرے قومی مجرم کی بیماری کا ذکر ہوا مولانا فضل الرحمان جس ایجنڈے پر کام کر رہا ہے پاکستان کی عوام سمجھ نہیں پا رہی۔ وطنعزیز میں عمران خان کی حکمرانی کے خلاف ایک سازش ناکام ہوتی ہے تو دوسری سر اُٹھالیتی ہے ۔مولانا فضل الرحمان کا دھرنا مارچ ناکام ہوا تو عدالت نے آرمی چیف قمر جاوید باجوہ کا مسئلہ کھڑا کردیا لیکن شکر ہے جمہوریت کے سر سے بلا ٹل گئی۔شاید اس لےے کہ حکمران جماعت نے جنرل مشرف کے خلاف حتمی فیصلہ روکنے کی درخواست کی
اور وزیرِاعظم پاکستان نے اپنی ایک تقریر میں عدلیہ کو مخاطب کر کے کہا انصاف سب کے لئے!!

جنرل پرویز مشرف کے خلاف گزشتہ پانچ سال سے غداری کا مقدمہ زیر سماعت ہے پاکستان میں پہلی بار کسی سابق فوجی حکمران پر آئین شکنی کے الزام میں غداری کا مقدمہ درج ہوا جسے پاکستان کی سیاسی اور عدالتی تاریخ کا اہم ترین مقدمہ کہا جارہاہے دلچسپ بات تو یہ ہے کہ یہ مقدمہ پرویز مشرف کے خلاف 1999ءمیں جمہوریت پرشپ خون مارنے کے جرم میں نہیں بلکہ 2007ءمیں لگائی گئی ایمرجنسی کے خلاف ہے ۔دراصل جنرل پرویز مشرف نہ تو غدار ہے اورنہ پاکستان کا دشمن اگر دشمن ہے تو سابق چیف جسٹس چوہدری افتخار احمد ،سابق صدر آصف علی زرداری اور سابق وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف کا اگر جنرل پرویز مشرف واقعی آئین کا غدار ہے تو جنرل محمد ایوب خان ،جنرل ضیاءالحق کے خلاف آئین سے غداری کا مقدمہ کیوںنہیں چلا حیرانی کی بات تو یہ ہے کہ جنرل ضیاءالحق نے پی پی پر ظلم وستم کے پہاڑ توڑے بھٹوکو ماورائے عدالت قتل کیا جیالوں پر پاکستان میں زندگی تنگ کردینے والے جنرل ضیاءالحق کے خلاف بلاول بھٹو خاموش ہے مشرف کے خلاف بول رہا ہے لیکن اپنے والد سے نہیں پوچھ رہا ہے کہ اپنے دور ِحکمرانی میں جنرل مشرف کو اعزاز کیساتھ کیوں رخصت کیا ؟

دراصل وطن عزیز میں اقتدار کی رسہ کشی میں خودپرست اور اقتدار پسند سیاستدان اپنے علاوہ کسی کو بھی محب ِوطن نہیں مانتے لیکن دنیا جانتی ہے کہ قوم اُن کو مسترد کرچکی ہے تحریک انصاف کے وزیر اعظم عمران خان چھ نشستوں کی برتری پر اپنی حکمرانی میں اپنے اُسی مقام پر ہیں جس کا اُس نے قوم سے وعدہ کیا تھا اگر اپوزیشن میں کوئی دم خم ہوتا تو پارلیمنٹ میں یہ تبدیلی لائی جاسکتی تھی لیکن اپوزیشن بخوبی جانتی ہے کہ اُن کے اپنے ہی اُن سے نالاں ہیں سینٹ میں اپنی برتری کا انجام دیکھ چکے ہیں ۔

وزیر اعظم پاکستان نے انتہائی نامساعد حالات کے باوجود امریکہ کی آنکھ میں آنکھ ڈال کر پاک چین اقتصادی راہداری (سی پیک)پر امریکی مداخلت کے خلاف سینٹ کے قائمہ کمیٹی میں قرار داد منظور کر کے امریکی موقف کو مسترد کرکے ثابت کردیا کہ پاکستان ایک خودمختار ریاست ہے پاکستان کے حکمران اور عوام ،دوست اور دشمن کو جانتے ہیں لیکن اگر نہیں جانتے تو مولانا فضل الرحمان کی دوسری APCاجلاس میں شریک بلاول بھٹو ،پروفیسر ساجد میر ،محمود خان اچکزئی ،احسن اقبال ،شاہ اویس نورانی ،میاں افتخار ،میر حاصل بزنجواور آفتاب شیرپاﺅ نہیں جانتے اس لےے کہ یہ بے روزگار ہیں ۔پاکستان کی عوام نے ان کو ان کی قیادت کا آئینہ دکھادیا ہے لیکن یہ لوگ اُس آئینہ میں اپنی صورت دیکھنا گوارہ نہیں کرتے ۔دوسری طرف وزیر اعظم پاکستان عمران خان ہے جسے اپنی قوم اور عوام پر اعتماد ہے اس لےے امریکی مداخلت کے خلاف قرار داد منظور کرکے اب مسئلہ کشمیر پر عالمی کانفرنس بلانے کا سوچ رہے ہیں ۔حکمران جماعت کیلئے ہر آنے والا کل مشکل سے مشکل تر ہوتا جارہا ہے لیکن عمران خان بخوبی جانتا ہے کہ
شاخِ گل میں پھول آنے سے پہلے خار آتے ہیں ۔

( قارئینِ کرام جان لیں کی میرا تعلق خوبصورت پاکستان اور افواجِ پاکستان سے ہے میرا کسی بھی سیاسی جماعت سے کوئی تعلق نہیںِ،میری سیاسی قیادت شہید ہو چکی ہے)

Read all Latest politics news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from politics and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Pakistan needs pti governance in Urdu | In Category: سیاسیات Politics Urdu News
What do you think? Write Your Comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.