رمضان المبارک اور تلاوتِ قرآنِ مجید

از:وسیم احمدرضوی،نوری مشن مالیگاؤں

رمضان المبارک کی عظمت و برکت اہلِ ایمان پر آفتابِ نیم روز کی طرح روشن وعیاںہے۔اس ماہِ سعید میں اہلِ ایمان عظیم روحانی انقلاب سے آشنا ہوتے ہیں ،ہرطرف عبادت و ریاضت اور حسن سلوک کا ماحول ہوتاہے،مسلمان فرائض کے ساتھ ساتھ نوافل کا اہتمام بھی کرتے ہیں،کیوں نہ ہو کہ آقائے کونین صلی اللہ علیہ وسلم نے اس ماہ میں نیکیوں کا ثواب70 گنازےاد ہ ملنے کی بشارت دی ہے۔اس کے علاوہ رمضان المبارک میںاہل ایمان کے لیے دین اسلام نے بہت سے نیک مواقع اور صالح اعمال کے ذرائع مہیاکیے ہیں،جن پر عمل پیرا ہوکر مسلمان نیکیوں کاذخیرہ اپنے نامہ اعمال میں جمع کر لیتے ہیں۔ اس سلسلے میں اگر غور کیا جائے تو معلوم ہوتا ہے کہ رمضان المبارک میں کچھ مخصوص علامات (symbols)ہیں جو نیکیاں کمانے کے بہترین اور آسان ذرائع ہیںجیسے سحری و افطار،بیس رکعات تراویح ، وغیرہ سے متعلق احادیث میںفضائل وارد ہوئے ہیں۔ان میں تراویح کو ایک خاص مقام حاصل ہے،جس کے ذرےعے بندگانِ خدا ”قیام اللّیل“کی لذت کومحسوس کرتے ہےں اور ساتھ ہی تلاوت و سماعتِ قرآن مجید کی سعادت بھی نصیب ہوتی ہے۔

رمضان المبارک اور قرآن مجید میں گہرا باہمی ربط ہے۔فرمانِ الٰہی ہے: شھر رمضان الذی انزل فیہ القران (البقرة:185)” رمضان کامہینہ جس میں قرآن اُترا“(کنزالایمان)اس لیے دونوں میں ربط و تعلق سے انکار نہیں کیا جاسکتا۔شاید تعلق ہی کی وجہ ہے کہ ماہِ رمضان شریف میں اہل ایمان بڑے ذوق و شوق سے تلاوتِ قرآن کی طرف رغبت پاتے ہیں۔خوب خوب تلاوت ہوتی ہے۔ خصوصاً تراویح میں کم از کم ایک مرتبہ قرآن پاک مکمل کیا جاتا ہے،جس کی ترغیب و تلقین ملتی ہے اور سیرت مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم سے بھی ثبوت ملتاہے کہ آقائے دوعالم صلی اللہ علیہ وسلم کا معمول یہ تھا کہ رمضان المبارک میں ایک مرتبہ ختم قرآن پاک فرماتے۔جس سے پتا چلتا ہے کہ رمضان المبارک میں ایک مرتبہ قرآن پاک ختم کرنا سنتِ مصطفی صلی اللہ علیہ وسلم ہے۔اس کے علاوہ جتنا بھی تلاوت کا اہتمام کیا جائے؛ نیک کام ہے۔مگر آج کل یہ بات نظر آرہی ہے کہ لوگ زیادہ سے زیادہ ختم قرآن کرنے اور ثواب کمانے کی دوڑ میںتلاوتِ قرآن سے متعلق بہت سی بے احتےاطیوں کا شکار ہوکر ثواب کی بجائے گناہ مول لے لیتے ہیں۔

مثلاً سب سے عام بے احتیاطی یہ پائی جاتی ہے کہ لوگ اس سرعت اورتیزرفتاری سے تلاوت کرتے ہیں کہ قرآن پاک کے مخارج اور صفات کی ادائیگی بہت مشکل سے ہوتی ہے،اکثر لوگ جلدی میں ”ا،ع؛س،ش، ص؛ ج،ذ،ز،ض اور ق،ک “کے درمیان تمیز اور فرق نہیں کرپاتے جس سے ”لحن جلی“واقع ہوتاہے اور علمِ تجوید کے مطابق لحن جلی سے قرآن کی تلاوت کرنااور سننادونوں حرام ہے۔(حاشیہ معرفةالتجویدص5)یہ فاش غلطی ان ائمہ سے بھی سرزد ہوجاتی ہے جوتراویح میںاتنی جلدی جلدی قرآن پڑھتے ہیں کہ یعملون تعملون کے علاوہ مشکل ہی سے کچھ سمجھ میں آتاہے۔ایسوں کو چاہیے کہ اپنی اصلاح کریں اوربلاوجہ خوداور دوسروں کا گناہ اپنے سر نہ لیں۔قرآن پاک کا یہ حق ہے کہ اسے اچھی طرح ٹھہرٹھہر کرپڑھاجائے۔ارشاد ربانی ہے:ورتل القرآن ترتیلا (سورہ مزمل: ۴)”اور قرآن خوب ٹھہر ٹھہر کر پڑھو۔“(کنزالایمان)اس لیے ضروری ہے کہ تراویح اور خاص طور پرشبینہ تراویح میں اس بات کا خاص خیال رکھا جائے ورنہ ثواب کی جگہ گناہ کاارتکاب ہوگا۔واضح رہے کہ ان غلطیوں کا قوی امکان مروجہ (شارٹ کٹ)چھ دن،آٹھ دن اور دس دن کی تراویح میں ہوتا ہے۔ سمجھنا چاہیے کہ اچھی آوازاوربہترین لہجہ میںپڑھناکمال نہیںبلکہ صحیح تلفظ اور اصولِ قرات کو ملحوظ رکھ کر پڑھناکمال ہے اور سعادت مندی بھی۔صدرالشریعہ علامہ امجد علی اعظمی رضوی علیہ الرحمہ(مصنفِ بہارِ شریعت) فرماتے ہیں کہ: ”خوش خواں کو امام بنانانہ چاہیے بلکہ ’درست خواں‘ کو امام بناناچاہیے۔ “(بہارشریعت حصہ چہارم،ص274)یہ بات محض ائمہ پر لاگو نہیں ہوتی بلکہ قرآن پاک کے پڑھنے والے تمام افرادکے لیے درسِ عبرت ہے۔

اسی طرح اگر تلاوتِ قرآن پاک کے ساتھ ساتھ معتبرومحتاط ترجمہ و تفسےرِقرآن کے مطالعہ کی عادت ڈالی جائے توہماری زندگی میں روحانی اور علمی انقلاب پیدا ہوسکتا ہے۔فکروشعورمیں بالیدگی اورپختگی پیداہوسکتی ہے….انگریزی کا مقولہ ہے کہ:something is batter then nothing(کچھ نہ ہونے سے کچھ ہونا بہتر ہے )اور معلمِ کائنات صلی اللہ علیہ وسلم ارشاد فرماتے ہیں:اللہ کے یہاںوہ عمل محبوب ہے جو مستقل ہو اگرچہ کم ہو۔ّ(مسلم،باب فضیلت عمل)۔ اس سلسلے میں یہ کیا جاسکتا ہے کہ روزانہ کم از کم ایک رکوع کی تلاوت کے ساتھ ترجمہ وتفسیر کے ساتھ کلامِ ربانی کو سمجھنے کی کوشش کی جائے اگر کوئی دشواری درپیش ہوتومعتبر علماسے رابطہ کرکے مددلی جاسکتی ہے۔اس طرح تلاوت کے ساتھ ساتھ علم دین سیکھنے کا بھی ثواب ملتارہے گا۔

نوٹ: تفسیر روح البیان، تفسیرنعیمی، تفسیر تبیان القرآن اور تفسیرِ اشرفی وغیرہ اردو زبان میں قرآن پاک کی بہترین تفاسیر شمار ہوتی ہیں۔ان سے استفادہ کیا جانا چاہیے۔

Read all Latest faiths and religions news in Urdu at urdutahzeeb.com. Stay updated with us for Daily urdu news from faiths and religions and more news in Urdu. Like and follow us on Facebook

Title: Ramadan a time for reciting the quran in Urdu | In Category: عقائد و مذاہب Faiths and religions Urdu News
Tags: ,
What do you think? Write Your Comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.